برطانیہ میں بلدیاتی انتخابات: لیبر پارٹی اور کنزرویٹو کو ووٹرزکے غم و غصے کا سامنا

رپورٹ: ابرار حسین۔ بولٹن

برطانیہ میں ہونے والے بلدیاتی انتخابات میں گریٹر مانچسٹر کی کونسلوں میں گو انتخابات کے نتائج میں لیبر پارٹی کا پلڑا بھاری رہا تاہم ووٹرز نے غزہ پر لیبر پارٹی اور حکمران جماعت کنزرویٹو کے موقف پر ووٹ کی صورت میں اپنے غم و غصے کا کھل کر اظہار کیا۔

اس بار ووٹرز کا رجحان گرین پارٹی اور رکن پارلیمنٹ جارج گیلوے کی ورکرز پارٹی کی جانب رہا، دونوں پارٹیوں کو حیران کن تعداد میں ووٹ ملے ہیں۔ انتخابی نتائج کے مطابق لیونز ہیوم کے حلقے میں ورکرز پارٹی کے امیدوار نے 1200 ووٹ حاصل کئے- ادھر اولڈہم میں 5 آزاد امیدوار کامیاب ہوئے اور لیبر پارٹی کا اقتدار وہاں سے ختم ہوگیا۔

گریٹر مانچسٹر میں سب سے اہم معرکہ مانچسٹر کی لانگ سائٹ وارڈ میں ہوا، جہاں ورکرز پارٹی کے امیدوار شہباز سرور نے مانچسٹر سٹی کے ڈپٹی لیڈر اور لیبر پارٹی کے امیدوار لطف الرحمن کو شکست دے دی۔ شہباز سرور نے 2444 ووٹ حاصل کرکے کامیابی حاصل کی جبکہ لطف الرحمن نے 2259 ووٹ حاصل کئے، جس سے انہیں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا-

لانگ سائٹ وارڈ سے دیگر امیدواروں میں سے لبرل ڈیموکریٹ کے سابق کونسلر لیاقت علی نے 110 ووٹ، برنارڈ جوزف گرین پارٹی نے 258 ووٹ۔ محمد عاقب انڈیپنڈنٹ پارٹی نے 48 اور کنزرویٹو پارٹی کے لبرٹی رو نے 164 ووٹ حاصل کئے۔

دیگر وارڈز میں برنج میں مانچسٹر سٹی کونسل کی لیڈر کونسلر بیو کریگ نے 2257 ووٹ حاصل کر کے دوسری دفعہ کونسلر منتخب ہونے کا اعزاز حاصل کیا، مدمقابل کوئی بھی امیدوار نمایاں ووٹ حاصل نہ کرسکا۔

دیگر وارڈز سے ایشیائی امیدواروں نے جو کامیابیاں حاصل کیں، اس کی تفصیل کے مطابق ویلی رینج سے لیبر کی کونسلر مقدسہ بانو نے2084 ووٹ، چیتھم ہل سے لیبر کے کونسلر شوکت علی نے 1966 ووٹ، کرمپسل سے لیبر امیدوار نسرین علی نے 1467 ووٹ، چارلسٹون سے لیبر امیدوار عظمی جعفری نے 1602 ووٹ، فیلو فیلڈ سے لیبر امیدوار غزالہ صادق، لیونز ہیوم سے لیبر امیدوار زاہد حسین نے 1950 ووٹ، موس سائیڈ سے لیبر امیدوار ایشا ممتاز نے کامیابی حاصل کی۔

لوکل کونسل کے انتخابات میں مانچسٹر کی پہلی صحافی خاتون کونسلر مقدسہ بانو دوسری مرتبہ لیبر پارٹی کی طرف سے ویلی رینج وارڈ سے کونسلر منتخب ہوگئی ہیں۔ انتخابی نتائج کے فورا بعد کونسلر مقدسہ بانو پریس کلب آف پاکستان یوکے پہنچیں، جہاں صحافی ساتھیوں نے ان کا خیر مقدم کیا۔ انتخابی نتائج مانچسٹر کی لیبر پارٹی کے لئے کسی حد تک مایوس کن اورکسی خطرے کی گھنٹی سے کم نہیں ہیں۔

اس موقع پر ورکرز پارٹی کے لیڈر جارج گیلووے نے واضح کیا کہ لوکل کونسل کے انتخابات میں ورکرز پارٹی کو ملنے والے ووٹوں سے ثابت ہوگیا کہ عوام ٹوری اور لیبر کی سیاست سے تنگ آچکے اور اس کا اظہار انہوں نے ورکرز پارٹی کوووٹ دے کر کیا ۔

انہوں نے مزید کہا کہ جس بڑی تعداد میں ورکرز پارٹی کو ووٹ دے کر ووٹرز نے اعتماد کا اظہار کیا ہے، وہ اس کو آگے بڑھائیں گے اور کھل کر غزہ اور فلسطین کی حمایت کریں گے، ورکرز پارٹی ظلم کے خلاف ہے اور ہمارا مطالبہ ہے کہ مسئلہ فلسطین کا پرامن حل نکالا جائے اور فلسطینی عوام کو ان کا حق دیا جائے-

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں