داڑھ مت نکلوائیں۔۔علاج موجود ہے

داڑھ کا درد رُلا دینے والا ہوتا ہے، اس درد کی وجہ دانت یا داڑھ میں انفیکشن کا پیدا ہونا ہے، انفیکش کو ہم عرف عام میں کیڑا لگنا کہتے ہیں۔اکثر ڈاکٹر اس کا حل یہی بتاتے ہیں کہ داڑھ نکلوا دی جائے یا روٹ کینال کروا لیا جائے۔حالانکہ یہ سب سے آخری حل ہونا چاہیئے۔
اب ہم بات کرتے ہیں اس کے علاج کی ۔داڑھ کھوکھلی ہوجائے۔یا مسوڑھے پر مستقل سوجن ہو، شدید درد ہوتا ہو تو پہلے تو ڈاکٹر کی لکھی ہوئی اینٹی بایوٹک گولیاں ہفتہ بھر ضرور کھائیے تاکہ وقتی طور پر انفیکشن اور درد سے نجات ملے۔۔اس کے ساتھ آپ نے شروع کرنا ہے اصل علاج۔۔یعنی آپ ماؤتھ واش سے دن میں تین بار کلیاں کیجئے۔۔ہر کھانے کے بعد میڈیکیٹڈ ٹوتھ پیسٹ سے دانت مانجھیئے۔ اورنمک کا پانی بنا کر بوتل ہر وقت ساتھ رکھیئے اور اس پانی سے بھی بار بار کلی کرتے رہیں۔۔یوں آپ کی داڑھ میں بیکٹیریا کا پلنا محال ہوجائے گا۔
اب اس کے ساتھ آپ نے ایک خاص ہومیو پیتھک دوا ، ارجینٹم نائٹڑیکم 30، کے دس قطرے تھوڑے سے پانی میں ڈال کر دن میں چار بار لینے ہیں۔ یہ دوا دانت کے کیڑے کو جڑ سے ختم کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔
اگر آپ نے یہ گھریلو علاج پابندی سے ایک ماہ تک کرلیا تو آپ کو اندازہ ہوجائے گا کہ آپ نے اپنے مرض پر قابو پالیا ہے۔
مرض ٹھیک ہونے کے بعد بھی ہومیو پیتھک دوا تین ماہ تک استعمال کرتے رہیں۔تاکہ بیکٹیریا کے خلاف مزاحمت باقی رہے۔یہ آزمودہ علاج ہے۔
اس علاج کے بعد آپ داڑھ نکلوانے یا روٹ کینال سے بچ جائیں گے۔یہ بہت بڑی کامیابی ہوتی ہے۔کھوکھلی داڑھ کے ساتھ زندگی گزارنا بہرحال بہتر ہے، بجائے اس کے کہ دانت ہی نکلوا دیا جائے۔ بس اتنا کرنا ہوگا کہ اس دانت کی صفائی کا ہمیشہ خاص خیال رکھنا پڑے گا.
ایک بات ہمیشہ یاد رکھیئے گا کہ دانت نکلوانا ہمیشہ ہمیشہ آخری ترجیح ہونا چاہیئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

داڑھ مت نکلوائیں۔۔علاج موجود ہے” ایک تبصرہ

  1. میں اس پرضرور عمل کروکروں گا ان شاء اللالله

اپنا تبصرہ بھیجیں