سندھ حکومت بھی کے الیکٹرک مظالم کا شکار، 20 ارب کی اووربلنگ

کے الیکٹرک کا ایک اور کارنامہ، عوام تو عوام، سندھ حکومت کو بھی چونا لگادیا، کے الیکٹرک کی جانب سے سرکاری داروں پر بھی اربوں روپے کی اووربلنگ کرنے کا انکشاف ہوگیا۔

یہ انکشاف وزیر توانائی سندھ ناصر شاہ نے بدھ کو کونسل آف اکنامک اینڈ انرجی جرنلسٹس کے ساتھ منعقدہ اجلاس کے دوران کیا۔

انہوں نے بتایا کہ کے الیکٹرک نے سرکاری اداروں پر 10 سال کے دوران 20 ارب روپے کی اووربلنگ کی، اس کے علاوہ رواں سال آڈٹ کے دوران کے الیکٹرک کی جانب سے 2 ارب روپے سے زائد کی اووربلنگ بھی ثابت ہوئی ہے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ حکومت کی جانب سے بجلی بلوں میں شفافیت کیلئے کے الیکٹرک کو اسمارٹ میٹرز کی تنصیب کیلئے اربوں روپے فراہم کئے گئے تھے تاہم آج تک کے الیکٹرک نے سرکاری اداروں میں اسمارٹ میٹرز نصب نہیں کئے، سیپکو اور حیسکو نے اسمارٹ میٹرز نصب کئے، جس کےبعد سے حکومت کو رئیل ٹائم ڈیٹا مل رہا ہے اور بجلی بلوں کی ادائیگیوں میں بھی شفافیت آگئی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ کے الیکٹرک نے سندھ حکومت سے تاحال معاہدہ نہیں کیا، سرکاری اداروں پر اتنی اووربلنگ ہوئی ہے تو سوچیں شہریوں کی حالت کیا ہوگی؟۔ ناصر شاہ نے کہا کہ اووربلنگ سے شہریوں کو بچانے کیلئے سندھ حکومت مشترکہ کمیٹی بنائے گی، حکومت اہلیان کراچی کو کے الیکٹرک کے مظالم کا شکار نہیں ہونے دے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں