بنے ہیں بابا آج دولہا..(ڈاکٹر وسیم عباس)

سجی ہے بزمِ ولایت فقیر خانے میں
بنے ہیں بابا آج دولہا پیر خانے میں

نورانی چہرا نوازا جنکو خاتم النبی نے
عطا کی سند ولایت جنہیں مولا علی نے
ڈھکی ہے رات غوثِ جیلان کی چادر میں

سجی ہے بزمِ ولایت فقیر خانے میں
بنے ہیں بابا آج دولہا پیر خانے میں

دیا جو درس فقط مخلوق کی بھلائی کا
ہو جائے پیدا جو صبر و شکر خدائی کا
یہ بھی ہے راستہ مالک تک رسائی کا

سجی ہے بزمِ ولایت فقیر خانے میں
بنے ہیں بابا آج دولہا پیر خانے میں

سوالی منگتے ہیں درویش ہیں عاجز ہیں
سبھی علم و عمل ملتے ہیں انکے در سے
پیالے بھرتے ہیں سبکے جامِ وحدت سے

سجی ہے بزمِ ولایت فقیر خانے میں
بنے ہیں بابا آج دولہا پیر خانے میں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

بنے ہیں بابا آج دولہا..(ڈاکٹر وسیم عباس)” ایک تبصرہ

  1. جنونِ تلاشِ یار میں ہم خود کو بلاتے جا رھے ہیں۔
    لاکھوں سمتیں ہیں اُس جانب،مگر ہم بن کر فقیر جا رہے ہیں۔

    وہ جو ہو جائے نظر اک بار اس جانب
    با خدا ہوش ہی نہ ہو کہ ہم کدھر جا رہے ہیں۔

    کسی کو طلب جنت کی اور کسی کو خوف دوزخ کا۔
    ہم تو بس رُخ جان جاناں ،رُخ جان جاناں کیے جا رہے ہیں۔

    میں اور مانگوں بھی کیا اُن سے عمر
    کیا یہی کم ہے کہ وہ اپنا عشق دیے جا رھے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں